لائبریری کو کتاب 72 سال بعد واپس ملی، کتاب کون سی تھی؟

لائبریری کو کتاب 72 سال بعد واپس ملی، کتاب کون سی تھی؟


نیویارک: امریکا کی ایک لائبریری نے کہا ہے کہ تھیوڈور روزویلٹ کی سوانح حیات حال ہی میں واپس ہوئی ہے، تقریباً 72 سال کی تاخیر سے۔

تفصیلات کے مطابق نیویارک کے ایک چھوٹے سے گاؤں میٹیٹک سے تعلق رکھنے والے جان موس نے کتاب لائبریری کو لوٹاتے ہوئے کہا کہ انھیں اس بات کا یقین نہیں ہے کہ ڈینیل ہینڈرسن کی کتاب ’گریٹ ہارٹ: دی لائف اسٹوری آف تھیوڈور روزویلٹ‘ ان کے قبضے میں کیسے آ گئی، لیکن حال ہی میں انھیں یہ کتاب اسٹور میں پڑی پلاسٹک کی ایک بڑی کریٹ میں ملی۔

خیال رہے کہ تھیوڈور روزویلٹ 26 ویں امریکی صدر تھے، جان موس نے کتاب کے حوالے سے کہا کہ ہو سکتا ہے یہ میرے والدین کے گھر سے ملی ہو جب 2013 میں میں نے ان کا گھر صاف کروایا تھا، یا یہ ان درجنوں کتابوں میں سے ایک ہوگی جو میں نے برسوں میں مختلف جگہوں میں لگی سیلز سے خریدی تھیں۔

موس نے یہ کتاب حال ہی میں سامنے آنے پر جب یہ دیکھا کہ یہ اماگنسیٹ فری لائبریری کی ہے تو واپس پہنچا دی، لائبریری والوں کا کہنا تھا کہ اس کتاب نے تو 5 اپریل 1949 کو واپس ہونا تھا۔

لائبریری کے ڈائریکٹر لارن نکولس نے میڈیا کو بتایا کہ کتاب کا یہ ایڈیشن 1919 کا ہے، اور اس پر لائبریری کی اصلی بک پلیٹ لگی ہوئی ہے، اور اس کی پشت پر سرکولیشن پالیسی بھی چپکائی گئی ہے، یہ دونوں چیزیں میں نے لائبریری میں ایک یا دو کتابوں ہی پر الگ الگ دیکھی ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ کتاب کی لیٹ فیس 1949 کی لائبریری فیس فی دن ایک پیسہ (پینی) کے حساب سے اب تک 262 ڈالر ہو چکی ہے، تاہم لائبریری نے بعد میں تمام لیٹ فیسیں ختم کر دی تھیں۔

Comments





Source link

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *